صحافت کیریئر اور مواقع[قسط:1] [Journalism]
زمرہ : ای-استاد
صفحۂ کاغذ پہ جب موتی لٹاتا ہے قلم
ندرتِ افکار کے جوہر دکھاتا ہے قلم
بندگانِ علم و فن کی خلوتوں کا آشنا
ان کے فکر و فہم کی باتیں سناتا ہے قلم
اپنی بات دوسروں تک پہنچانا ، ایک ایسی خواہش ہے جو روز اول سے ہی انسان کے دل میں موجود ہے۔ یہ خواہش کبھی داستان، ناول یا افسانے کا روپ اختیار کرلیتی ہے اور کبھی غزل میں ڈھل جاتی ہے۔ وقت اور حالات اس کے طریقۂ اظہار میں تبدیلیاں لاتے رہتے ہیں اور بات کہنے کا طریقہ بدلتا رہتا ہے۔
صحافت روزمرہ کی زندگی میں رونما ہونے والے واقعات کو پیش کرنے کا ایک ذریعہ ہے۔ صحافت کا مقصد لوگوں کو تفریح، آگاہی اور تعلیم دینا ہے۔ آج صحافت کو پوری دنیا میں بہت اہم مقام حاصل ہے۔اسے جمہوریت کا چوتھا ستون بھی سمجھا جاتا ہے۔
حضرت علیؓ کا قول ہے:
’’انسان ہر وقت ، ہر عمر میں علم و ہنر اور فن حاصل کرسکتا ہے۔‘‘
صحافت جدید حالات کی پیداوار ہے۔ تیز رفتار زندگی اور لمحے بدلنے والے سیاسی ، سماجی اور معاشرتی حالات اگر ادب کے کسی صنف کی پکڑ میں آسکتے ہیں تو وہ صحافت ہے۔
17 ؍نومبر کو قومی صحافت کا دن منایا جاتا ہے۔ آئیے جانتے ہیں کہ ہم کیسے صحافت میں اپنا کیریئر روشن کرسکتے ہیں۔
ہر چیز کی طرح جو ہمارے ارد گرد مسلسل تبدیل ہوتی رہتی ہے، اسی طرح صحافت میں بھی تبدیلیوں کے ساتھ ترقی ہوئی ہے۔
ایک صحافی کو بہت پڑھا لکھا شخص ہونا چاہیے، جس کا پس منظر ادب ، تاریخ اور بڑے پیمانے پر مواصلات میں ہو۔ صحافیوں سے یہ بھی توقع کی جاتی ہے کہ وہ سماجی ذمہ داری کا احساس رکھیں اور اخلاقی معیارات پر سختی سے عمل کریں۔
وقت کے ساتھ ترسیل کا فارمیٹ عوامی تقاریر سے تیار ہوا، جس میں پرنٹ شدہ اخبارات، میگزین، ٹیلی گراف، ریڈیو، ٹیلی ویژن اور حال ہی میں آن لائن پلیٹ فارم شامل تھے۔
اگرچہ ان دنوں صحافت ایک بہت اہم پیشہ ہے، بلکہ یوں سمجھ لیجیے کہ بالکل مختلف ہے۔ صحافت میں اب عوام تک خبریں پہنچانے کے لیے مختلف اقسام ، تکنیک اور مقاصد سامنے آئے ہیں۔
صحافت کی مختلف اقسام
1 ۔ تحقیقاتی صحافت:
تحقیقاتی صحافت کا تقاضہ ہے کہ صحافی اپنے اندر کے چھپے ہوئے جاسوس کو پہچانے۔ صحافت کی یہ صنف زندگی کے ہر شعبہ میں راز فاش کرتی ہے۔ سیاسی بد عنوانی، دھوکہ دہی کے الزامات ان کا نام لیتے ہیں اور قارئین کو دعوت دیتے ہیں کہ وہ پیش کردہ حقائق کے بارے میں مزید سوچیں۔
تحقیقاتی صحافت کو کسی بھی شعبہ میں استعمال کیا جاسکتا ہے۔ کیوں کہ آپ کسی کو بھی نہ صرف دلچسپی کا باعث بنا سکتے ہیں، بلکہ متجسس بھی بنا سکتے ہیں۔اس قسم کی صحافت حقائق، سحر انگیز عناصر اور قاری کے تجسس پر بہت زیادہ انحصار کرتی ہے۔
2۔ نیوز جرنلزم
نیوز جرنلزم صحافت کی وہ قسم ہے، جو پیشے کے پرانے تکرار کے ساتھ قریب سے جڑی ہوئی ہے۔مثلاً:مختصر اور نقطۂ پر اس صنف کے مضامین صرف خبروں کا ایک ٹکڑا پہنچاتے ہیں۔ کوئی شوگر کوٹنگ کوئی مداخلت کرنے والی رائے اور کچھ نہیں۔
3۔ کالم
کالم جدید دنیا میں ذاتی بلاگ کی طرح ہے۔ ایک مصنف ایک اخبار میں ایک کالم کا دعویٰ کرتا ہے ۔ جو کہ ایک باکس جتنا چھوٹا ہو سکتا ہے یا ایک پورے صفحے جتنا بڑا ہو سکتا ہے اور جو کچھ وہ چاہے لکھ سکتا ہے۔
کالم مکمل طور پر مصنف کے لیے وقف ہے ، جو بعض اوقات اس کے لیے نام کا انتخاب بھی کرتا ہے۔ کالم نگار کی اپنی جگہ ہوتی ہے کہ وہ اپنے خیالات کسی اخبار یا میگزین میں شیئر کرے۔
کالم کی بنیادی توجہ مصنف کی شخصیت ہے۔ وہ کیا پسند کرتے ہیں، وہ کیا کرتے ہیں اور وہ کیا لکھتے ہیں ، بنیادی طور پر۔ مشہور مصنفین کی مثالیں جو کالم نگار تھے/ہیں ان میں چارلس بوکوسکی ، سٹیفن کنگ اور مچ البوم شامل ہیں۔
بہت سے مصنف بالآخر دوسرے فارمیٹس کی طرف بڑھتے ہیں، جب کہ دوسرے اپنی موجودگی اور شہرت کو محفوظ رکھنے کے لیے کالم کرتے ہیں۔ایک کالم بعض اوقات وفادار قارئین کی تعمیر کے لیے سڑک پر پہلا پڑاؤ ہوتا ہے۔
4۔فیچر رائٹنگ
فیچر کی تاریخ اتنی ہی قدیم ہے جتنی کہ خود صحافت ہے۔ کہا جاتا ہے کہ’’ اردو صحافت‘‘میں فیچر کا لفظ انگلش سے آیا ہے۔ پھر رفتہ رفتہ مقبول سے مقبول تر ہوتا چلا گیا۔ اب کوئی اہم اخبار فیچر سے خالی نہیں ہوتا۔
اس میں روزانہ کی خبریں ، حالات حاضرہ اور قارئین کی اکثریت کے دلچسپی کے موضوعات زیر بحث ہیں۔ اس کا مقصد تفریح ​​، آگاہی اور معلومات کو عوامی مفید انداز میں پیش کرنا ہے۔
ترسیل کے ذرائع پر مبنی صحافت کی اقسام
خبر کی ترسیل کے ذرائع کی بنیاد پر صحافت کو تین اقسام میں تقسیم کیا جا سکتا ہے: (۱)ٹی وی اور ریڈیو جرنلزم(۲)براڈ کاسٹ جرنلزم ، پرنٹ جرنلزم ، اور(۳) آن لائن جرنلزم۔
سائبر/ آن لائن/ ڈیجیٹل صحافت
سائبر صحافت یا آن لائن صحافت یا ڈیجیٹل صحافت جدید ترین قسم کی صحافت ہے۔ جیسا کہ نام سے پتہ چلتا ہے ، یہ مختلف انٹرنیٹ پلیٹ فارمز پر فراہمی سے متعلق ہے۔ ورلڈ وائڈ ویب [www]اور انٹرنیٹ کے متعارف ہونے کے بعد پوری دنیا ایک ورچوئل گلوبل ولیج بن گئی ہے۔
آسانی سے قابل رسائی پلیٹ فارم کی ایک بڑی تعداد کے ساتھ ، سائبر یا آن لائن صحافت کی مقبولیت میں اضافہ ہوا ہے۔ یوٹیوب پر صحافت کے لیے وقف کئی چینلز کی پیروی کی جاتی ہے۔ یہاں تک کہ مختلف ٹی وی اور پرنٹ میڈیا ہاؤسز نے بلاگز، ویب سائٹس، یوٹیوب اور مختلف سوشل میڈیا ایپلی کیشنز کے ذریعے ڈیجیٹل جانا شروع کر دیا ہے۔
پرنٹ صحافت
اس قسم کی صحافت اخبارات ، میگزین وغیرہ کے ذریعے خبروں کی فراہمی سے متعلق ہے۔ چوں کہ یہ ذرائع دیگر خبروں یا معلومات کو اسی طرح رکھ سکتے ہیں۔ ایک صحافی ایک ہی وقت میں دونوں پرنٹ کے ساتھ ساتھ کچھ دوسرے میڈیا کے لیے بھی کام کر سکتا ہے۔
مواد کے زیادہ اخراجات ، سبسکرپشن کی کم تعداد اور دیگر آسانی سے قابل رسائی میڈیا پلیٹ فارمز میں اضافے نے پرنٹ صحافت پر بہت زیادہ اثر ڈالا ہے۔(جاری)
اپنی بات دوسروں تک پہنچانا ، ایک ایسی خواہش ہے جو روز اول سے ہی انسان کے دل میں موجود ہے۔ یہ خواہش کبھی داستان، ناول یا افسانے کا روپ اختیار کرلیتی ہے اور کبھی غزل میں ڈھل جاتی ہے۔ وقت اور حالات اس کے طریقۂ اظہار میں تبدیلیاں لاتے رہتے ہیں اور بات کہنے کا طریقہ بدلتا رہتا ہے۔

1 Comment

  1. مبشرہ

    بہترین مضمون زہرہ اللہ کرے زورِ قلم اور زیادہ

    Reply

Submit a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

نومبر ٢٠٢١