حمد
تو ہی آقا ، تو ہی مولا تو ہی ربِ دوجہاں
ہر ثنا ہے تجھکو زیبا ، مالکِ کون و مکاں

حمد لکھ پاوُں میں تیری تاب یہ مجھ میں کہاں
ہو اگر چشمِ کرم تیری تو ممکن ہو بیاں

ذات تیری ہر جگہ ہے پھر بھی آنکھوں سے نہاں
تیری قدرت ، تیرا جلوہ ، ذرے ذرے سے عیاں

تیری رفعت ، تیری حکمت تیری حشمت مرحبا
چاند سورج رات دن سب تیری عظمت کے نشاں

عقلِ انساں محوِ حیرت ہے تری تخلیق پر
بن گئے اک لفظِ “ کن ‘‘ سے بحر و بر ہفت آسماں

تو ہے رحمٰن و رحیم و مالک الملک و کریم
گرچہ “ شازی ‘‘ غرقِ عصیاں ، تیری رحمت بیکراں

0 Comments

Submit a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

مارچ ۲۰۲۱