کرناٹک سے تعلق رکھنے والی ناگ مانی۲۴؍ سال کی تھیں، ان کے بال بہت گرنے لگے تھے ،انہوںنے اپنے گرتےبالوں پر تشویش کا اظہار اپنی میسورکی ایک دوست سے کیا ۔اس دوست نے اسے بال کو گرنے سے روکنے کے لیے ہیئر آئل کا فارمولا شیئر کرتے ہوئے بتایا کہ ترکیب آج سے کم از کم ۱۵۰؍سال پرانی ہے ۔ناگ مانی نے اسی ترکیب پر ہئیر آئل تیار کیا ۔ ایک ماہ کے اندر ان کے بال گرنے میں بڑی حد تک کمی آئی اور چھوٹے چھوٹے بال نمودار ہو ئے۔ انہوں نے تیل کی بوتلیں اپنے بہت سے دوستوں اور خاندان کے افراد کے حوالے کیں۔ ان میں سے کچھ نے اسے کاروبار میں تبدیل کرنے کا مشورہ دیا، ناگ مانی، جسے سب لوگ ’’منی آنٹی ‘‘کہا کرتے تھے۔وہ اپنے شوہر اور دو بیٹیوں کی دیکھ بھال پر توجہ دینا چاہتی تھیں۔اپنے بزنس کی کہانی بیان کرتے ہوئے وہ کہتی ہیں کہ’’ یہ اس وقت کی بات ہے جب میں نے اپنے شوہر کی موت کے تین سال بعد، ۶۰ کی دہائی کے آخر میں ، اپنےبزنس کا باضابطہ آغازکیا،جس کا نام ’’روٹس اینڈ شوٹس‘‘تھا۔
میرے ابتدائی گاہک بنگلورو میں چند سیلون مالکان تھے۔ بعد ازاں’’ میری‘‘ (Mary)، جو ’’ہالاسورو‘‘ میں’’ امبارا بوتیک ‘‘چلاتی ہے، انہوں نے برانڈ کو’’ اے ہنڈریڈ ہینڈز ‘‘(A Hundred Hands) نامی ایک غیر منافع بخش ٹرسٹ سے متعارف کرایا۔ ہمیں ہر سال ٹرسٹ کی طرف سے منعقد ہونے والی ایک نمائش کے دوران ایک اسٹال چلانے کے مواقع ملے اور پلک جھپکتے ہی ہیئر آئل کی بوتلیں فروخت ہو گئیں۔‘‘
پروڈکٹ کی تیاری اور محنت :
منی آنٹی کی کامیابی سخت محنت اور ایمانداری کی وجہ سے ہے ۔اپنے پروڈکٹ کی تیاری مین منی آنٹی ۶۵ سال سے کڑی محنت اور لگن کی وجہ سے اپنے گاہک کے کے لیے ان مول ہیں وہ گاہک سے اعتماد حاصل کرنے میں کامیاب ہیں ،جو بزنس کا سب سے اہم حصہ ہے ۔
۸۸؍سالہ منی آنٹی جو اپنی بیٹی’’ اچلا سری واتسا ‘‘کے ساتھ’’ السور‘‘ میں رہتی ہیں، کہتی ہیں’’منی آنٹی کے بالوں کا تیل بنانا ایک تکلیف دہ عمل ہے۔ پروڈکٹ ناریل کے تیل پر مبنی ہے اور اس میں چار تیل کے بیج ہیں۔ ان میں سے ایک میتھی ہے۔ دو بیج کافی مہنگے اور نایاب ہیں۔ ہم اسے ہماچل پردیش سے قریبی دکاندار کی مدد سے حاصل کرتے ہیں۔‘‘ منی آنٹی کی بیٹی اچلا جو کاروبار میں اس کی مدد کرتی ہیں،وہ بتاتی ہیںکہ’’اجزاء کو جمع کرنے کے بعد، بیجوں کو ہاتھ سے پھینک دیا جاتا ہے۔پھراسے ناریل کے تیل میں ملا کر کم از کم چھ ہفتوں تک سورج کے نیچے چھوڑ دیا جاتا ہے۔ یہ وہی چیز ہے جو تیل کو مختلف بناتی ہے۔ ہم اجزاء اور تیل کو پیستےیا گرم نہیں کرتے ہیں۔ یہ عمل سال میں ایک بار کیا جاتا ہے، کیونکہ یہ زیادہ تر موسمی حالات پر منحصر ہوتا ہے۔ ہم تیل کی تیاری کے لیے دو کارکنوں سے مدد لیتے ہیں ،اور تیل میں مکمل طور پر گھریلو مصنوعات ہیں۔‘‘ اچلا جو ایک کنسلٹنٹ کے طور پر کام کرتی ہیں،شیئر کرتی ہیں کہ’’ بیچ کی تمام بوتلیں منی آنٹی اپنے ہاتھ سے چیک کرتی ہیں ۔اگر وہ برگنڈی رنگ میں پھیکا پن یا بو میں تبدیلی دیکھتی ہیں تو بوتل کو ایک طرف رکھ دیتی ہیں ۔ہم اپنے عروج کے دور میں تقریباً۶۰،۷۰لیٹر تیل فروخت کرتے ہیں۔
ہماری تمام گاہک خواتین اور بنگلور میں ہیں۔ ان میں سے کچھ اپنے گھر والوں اور دوستوں کو تیل کا مشورہ دیتے ہیں، جو بوتلیں گھر لے جاتے ہیں اور یہاں تک کہ باہر کے ممالک بھی۔‘‘اچلا نے بتایا کہ’’اے ہنڈریڈ ہینڈز کے ٹرسٹیز میں سے ایک اور روٹس اینڈ شوٹس کی باقاعدہ کسٹمر’’ مالا دھون ‘‘کہتی ہیںکہ مجھے اس پروڈکٹ سے اچلا اور اس کی بہن کے ذریعے متعارف کرایا گیا جو میری قریبی دوست تھیں۔ یہ اس وقت کی بات ہے جب تنظیم نے اپنی فروخت کے لیے برانڈ کے ساتھ تعاون کیا۔ میں اس پروڈکٹ کی طرف متوجہ ہوئی ،کیونکہ یہ ہوم میڈ ہے اور یہ بالوں کے گرنے کو کنٹرول کرنے کے ساتھ ساتھ بالوں کی نشوونما کو فروغ دینے میں بہت مؤثر ثابت ہوئی۔ میں اسے پچھلے۱۰؍ سالوں سے استعمال کر رہی ہوں، اور مجھے بہت خوشی ہے کہ وہ تیل کے پرانے فارمولے کو کامیابی کے ساتھ چلا رہی ہیں ۔ ‘‘اچلا کا کہنا ہے کہ ’’عمل اور اجزاء کی قیمت اس شرح کی وجہ ہے۔ پھر بھی، ہم اس سے بہت زیادہ منافع نہیں کماتے ہیں۔ ہمارا بزنس مائیکرو فائینیس پر ہے ۔ اگر ہم بڑے پیمانے پر جائیں، تو چیزیں بدل سکتی ہیں، لیکن اس سے معیار میں بہت سے سمجھوتے ہو جائیں گے، جسے ہم بالکل بھی ترجیح نہیں دیتے۔ اس کے علاوہ یہ میری والدہ کے مشغلے کے طور پر شروع ہوا ،اور اس کی ترکیب کو محفوظ کرنے کے ساتھ ساتھ اسے اگلی نسل تک لے جانے میں دلچسپی کی وجہ سے ہم اسے اسی طرح باقی رکھنا چاہتے ہیں
‘‘ وہ مزید کہتی ہیں کہ’’ دیکھ بھال اور اسے مزید بڑھانے کے لیے کافی بوڑھی ہو گئی ہوں۔ میری بیٹی اپنے کام میں مصروف ہے۔ لیکن ہم نے اجزاء کو برانڈ میں تبدیل کرنے اور پروڈکٹ کو لیبل کرنے کے لیے بہت زیادہ کام کیا ہے۔ ہم اسے اسی طرح جاری رکھنا پسند کرتے ہیں، لیکن کچھ حدود ہیں، کیونکہ ہم کاروباری پس منظر والے خاندان سے تعلق نہیں رکھتے۔ آنے والی نسلوں کے ساتھ ترکیب کا اشتراک کرنا اب سب سے بڑا مقصد ہے۔ ہم صحیح ٹیم کے ساتھ تعاون کرکے ایسا کرنا پسند کریں گے، جو قدر کو سمجھتی ہے اور معیار کو برقرار رکھتی ہے۔‘‘مانی آنٹی کو یہ کہتے ہوئے فخر ہے کہ’’ انہوں نے مارکیٹنگ پر ایک پیسہ بھی خرچ نہیں کیا۔ تمام فروخت منہ زبانی گاہک کے ذریعہ ہوئی۔‘‘ہر سال ایسا ہوتا ہے کہ وہ طلب پوری نہیں کر پاتیں۔ ان کے پاس محدود اسٹاک ہے کیونکہ یہ عمل سال میں ایک بار ہوتا ہے۔یہاں تک کہ ایک عمر رسیدہ ہونے کے باوجود، منی آنٹی متعدد سرگرمیوں میں مصروف ہیں اور انہیں موسیقی، کرکٹ اور کھانا پکانے میں دلچسپی ہے۔ یہاں تک کہ انہوںنے دو کنڑ البمز بھی ریکارڈ کیے۔وہ کہتی ہیں’’ میں وبائی امراض کے پھیلنے تک بنگلورو میں ایک سوشل کلب بوئرنگ انسٹی ٹیوٹ کی ایک فعال ممبر تھی۔ اگرچہ وہ دوبارہ کھل گئے ہیں، میں اب اس جگہ کا دورہ نہیں کرتی اور اپنی بیٹی کے ساتھ گھر میں وقت گزارتی ہوں۔‘‘ کثیر جہتی لیکن مانی آنٹی کے لیے زندگی گلابوں کا بستر نہیں تھی۔ وہ چند سال قبل اپنی بڑی بیٹی کو کھو چکی ہیں۔وہ کہتی ہیں’’ہم نےاپنی بہن کی موت کے بعد کاروبار کو سنجیدگی سے لیا۔ ہمیں نہیں معلوم تھا کہ اور کیا کرنا ہے اور اس خلا کو کیسے پُر کرنا ہے۔‘‘ اچلا کہتی ہیں’’۲۰۰۳ ؍میں، اس واقعے سے پہلے، منی آنٹی نے کیموتھراپی کروائی کیونکہ ان میں ٹیومر پیدا ہوا تھا۔ میری ماں ایک سپر اسٹار ہے۔ میں نے اس جیسا پرعزم اور مضبوط کوئی نہیں دیکھا۔ وہ چاہے کچھ بھی ہو اپنے ذہن کی بات کرتی ہے اور جس چیز سے پیار کرتی ہے اس کے پیچھے جانے کی ہمت پاتی ہے۔ مجھے ایک بزنس پارٹنر اور دوست کے طور پر اس کے ساتھ رہنے پر خوشی ہے۔‘‘یہ جوڑی اپنےجادوئی تیل کی اگلی کھیپ تیار کرنے کے لیے پوری طرح تیار ہے، موسم کے دوبارہ دھوپ ہونے کا انتظار کر رہی ہے۔

عمل اور اجزاء کی قیمت اس شرح کی وجہ ہے۔ پھر بھی، ہم اس سے بہت زیادہ منافع نہیں کماتے ہیں۔ ہمارا بزنس مائیکرو فائینیس پر ہے ۔ اگر ہم بڑے پیمانے پر جائیں، تو چیزیں بدل سکتی ہیں، لیکن اس سے معیار میں بہت سے سمجھوتے ہو جائیں گے، جسے ہم بالکل بھی ترجیح نہیں دیتے۔ اس کے علاوہ یہ میری والدہ کے مشغلے کے طور پر شروع ہوا ،اور اس کی ترکیب کو محفوظ کرنے کے ساتھ ساتھ اسے اگلی نسل تک لے جانے میں دلچسپی کی وجہ سے ہم اسے اسی طرح باقی رکھنا چاہتے ہیں ۔

0 Comments

Submit a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

جولائی ٢٠٢٢