انٹرویل ختم ہو چکا تھا ۔بچے جلدی جلدی ٹفن کھا کر خوشی خوشی کلاس روم میں پہنچ چکے تھے ، کیوں کہ آج سب کی پسندیدہ ٹیچر مس جویریہ کا ڈرائنگ کا پیریڈ تھا ۔ تمام بچے ایکسائیٹیڈ تھے۔ دیکھیں آج مس کیا ڈرا کرنے کےلیے کہتی ہیں۔مس کلاس میں مسکراتے ہوئے داخل ہوئیں اور بچوں کو سلام کیا۔ ’’السلام علیکم پیارے بچو!‘‘
’’وعلیکم السلام ڈیر مس !‘‘بچوں نے لہک کر ایک ساتھ جواب دیا۔
’’مس آج کیا بنانا ہے؟‘‘ بچوں نے سوال کیا۔
’’آج کچھ نیا کرتے ہیں۔ سب کے لیے الگ الگ ڈرائنگ۔کیسا رہےگا؟‘‘ اب کی بار مس نے سوال کیا۔
’’وہ کیسے؟‘‘سب بچے حیران تھے۔
’’آپ سب کے گھروں میں کوئی نہ کوئی پالتو جانور یا پرندہ ہوگا، آپ اس کی تصویر بنائیے۔‘‘سب بچے خوشی خوشی ڈرائنگ کرنے لگے۔کسی نے بلی کی تصویر بنائی ، کسی نے کبوتروں کی اور کسی نے خرگوش اتارا۔مس نے دلچسپی سے دیکھتے ہوے سب کے ڈرائنگ پیپر جمع کیے۔
’’کیا آپ میں سے کوئی جانتا ہے کہ ہمارے پیارے نبی ﷺ نے جانوروں کے تعلق سے کیا کہاہے؟‘‘ مس جویریہ نے کلاس پر طائرانہ نظر ڈالی۔ایک ننھا سا ہاتھ اوپر اٹھا۔
’’ ہاں آپ بتائیے عمر!‘‘مس نے اجازت دی۔
’’پیارے نبیﷺ نے فرمایا، ہر جاندار کے ساتھ رحیمانہ سلوک پر ثواب ملتا ہے۔‘‘ننھا عمر بول پڑا۔
’’ میں وہ Story سناؤں؟‘‘
’’ باتونی کلثوم نے پوچھا، اور ٹیچر کے اجازت دینےسے پہلے ہی سنانا شروع کردیا۔
’’ پیارے نبیﷺ کے ساتھی کہیں جارہے تھے، جنگل میں انہوں نے لال چڑیا دیکھی، اس کے دو ننھے ننھے بچے بھی تھے۔ پیارے نبیﷺ کے ساتھیوں نے چپکے سے بچوں کو چادر میں پکڑ لیا۔چڑیا پر کھول کر ان کے سر پر منڈلانے لگی۔پیارے نبی ﷺ نے دیکھا تو ساتھیوں پرناراض ہوئے۔ فرمایا: ماں سے بچوں کو جدا نہ کرو، انہیں آزاد کردو۔‘‘مس جویریہ مسکرا پڑیں۔
’’ واہ بہت خوب! آب کو یہ سب کس نے بتایا؟‘‘
’’ہماری مما نے۔‘‘ کلثوم اور عمر بیک وقت بول پڑے۔مس نے دونوں کو سراہا۔
’’ پیارے بچو! ہمارے نبیٔ کریم صلی اللہ علیہ وسلم صرف انسانوں پر ہی نہیں، جانوروں پر بھی بہت مہربان رہتے تھے۔ اسی لیے اللہ میاں نے آپ ﷺ کو رحمۃ للعالمین کہا ہے۔ ‘‘

آڈیو:

3 Comments

  1. سمیہ شیخ ناگپور

    میں اس کہانی کے قلمکار کی مشکور ہوں جنہوں نے یوم حیوانات کے لئے اس خوبصورت حدیث کا چناؤ کیا ہم دیکھتے ہیں کہ آج کل بچے لو برڈ کو پالنے کے شوقین ہوگئے ہیں پرندوں کو گھروں میں پنجروں میں قید کرنا معاشرے میں کلچر بنتا جا رہا ہے صرف اپنے اسٹیٹس کو دکھانے کے لئے معصوموں کیا آہیں لینا کہاں کی عقلمندی ہے بچوں میں اس چیز کے شعور کو جگانے کی بڑی عمدہ پہل ہے….

    Reply
    • Mohammad loriya

      آپ کی بات بلکل سحىح ہے

      Reply
  2. نام *urusa taiba

    Mashallah bcho k liye umda nasihat

    Reply

Submit a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

۲۰۲۲ اکتوبر