شکر کہ تجھ کو رب نے بنایا انسان
اپنے ہونے کے مقصد کو پہچان
جستہ جستہ سمجھ خدا کا فرمان
کہنے والے کی باتوں پر دے دھیان
تجھ سے باتیں روز ہے کرتا رحمان
رجوع الی القرآن رجوع الی القرآن

رب کی چٹھی آئی تیرے ہے نام
کھول کے چٹھی پڑھ تو لے یہ پیغام
اور مخاطب اس کے ہیں خاص و عام
چٹھی کیا ہے یہ ہے حرفِ الہام
یہ گل اور دل تیرا اس کا گلدان
رجوع الی القرآن رجوع الی القرآن

دنیا دنیا کیا کرتا ہے نادان
دیکھ کے دنیا مت ہو زیادہ حیران
یہ ہے سرائے اور تو یہاں کا مہمان
اس سچائی سے رہتا ہے کیوں انجان
عقبیٰ کا بھی کچھ تو کرلے سامان
رجوع الی القرآن رجوع الی القرآن

باتیں فرشتے کرتے ہیں یہ اکثر
یہ تو وہی ہے جو تھا ہم سے برتر
جس نے چلایا شیطان پر بھی نشتر
اتنا ہلکا اس کے عمل کا دفتر!
وقت ہے اب بھی روشن کر کچھ امکان
جوع الی القرآن رجوع الی القرآن

نیک اور بد کے فرق کو اچھے سے جان
ہو جائے گا جینا تیرا آسان
راہ نہارے مالک بھی اور رضوان
رستہ تیرا دیکھ رہے دو دربان
کہتا ہے یہ دو عالم کا سلطان
رجوع الی القرآن رجوع الی القرآن

0 Comments

Submit a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

نومبر٢٠٢٢