سخن سراپا

غزل

غزل

نمرہ شکیل

درد کے دن بھی کسی طور گزر جائیں گے ان میں ہم لوگ نہ بکھرے تو سنور جائیں گے سانس لینے سے فقط عمر تو...

قائدعصر

قائدعصر

شبیر عالم

شکوہ تمنا رنج و غم اس جہاں کے پیچ و خم ہو جسے دردِجہاں گل سے لے وہ چشمِ نم ہوجسے مقصد عزیز کر رہے...

غزل

غزل

سیمیں فلک علیگ

بس اب بہت ہوا یہ آسماں اٹھا ليا جائے یہ اپنا شہر بھی، سارا جہاں اٹھا لیا جائے اب اس کی بستی میں...

نظم

نظم

پیکر سعادت معز

کل کسی نے کب ہے دیکھا کام یہ کرناہے آج آئیے مل کر بنائیں ایک پاکیزہ سماج درد، دکھ، رنج و الم میں...

دعا

دعا

درشہوار شاہین

یا رب! تو مری قوت برداشت بڑھا دے الفاظ کے دکھ سے نہ پریشان رہوں میں میرے یہ قدم حق پہ یوں مضبوط...

نظم

نظم

انتظار نعیم

جماعت کا حلقہ بڑھائیں گے ہم چلو کارکن اب بنائیں گے ہم چراغ محبت جلائیں گے ہم دیئے نفرتوں کے...

ہیں ہم؟

ہیں ہم؟

فوزیہ ربابؔ

آنٹی مجھ کو ڈر لگتا ہے کل شب تھی اک بے چینی سی نیند کی دیوی روٹھی سی تھی میں نے کمرے کی کھڑکی کے...